کوہ کن کوہ کن نہیں ہوتا

غزل

زار

کوہ کن کوہ کن نہیں ہوتا
جانِ من! عشق فن نہیں ہوتا

لوگ پوچھیں تو ٹال جاتا ہوں
ورنہ اتنا مگن نہیں ہوتا

خستہ پائی نے ہوش چھین لیے
خواب میں بھی وطن نہیں ہوتا

رہ گزاروں میں سڑتی ہے ننگی
بے کسی کا کفن نہیں ہوتا

وحشتوں کا الیم تر دوزخ
شہر ہوتا ہے، بن نہیں ہوتا

بات کرتے کبھی کبھی راحیلؔ
ضبط کرنے پہ من نہیں ہوتا

راحیلؔ فاروق

زار کے مصنف۔ پنجاب، پاکستان سے تعلق رکھنے والے اردو شاعر۔

یہ غزل اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on pinterest
Share on reddit
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لطفِ سخن کچھ اس سے زیادہ

ہم روایت شکن روایت ساز

پر

خوش آمدید!

باتیں ہماری یاد رہیں گی۔۔۔

تنبیہ