میرے طبیب کی قضا میرے سرھانے آ گئی

اردو شاعری

میرے طبیب کی قضا میرے سرھانے آ گئی
چارہ گرانِ عشق کی عقل ٹھکانے آ گئی

رات کی خیمہ گاہ میں شمع جلانے آ گئی
آ گئی مہرباں کی یاد آگ لگانے آ گئی

بندہ نواز کیا کروں مجھ کو تو خود نہیں خبر
فرش میں عرش کی کشش کیسے نجانے آ گئی

جس کے وجود کا پتا موت کو بھی نہ مل سکا
اس کی گلی میں زندگی شور مچانے آ گئی

خاک ہوا تو دیکھیے خاک پہ کیا کرم ہوا
کوچۂِ یار کی ہوا مجھ کو اڑانے آ گئی

موجِ وصال کی قسم اوجِ خیال کی قسم
ایک بہار عشق پر آ کے نہ جانے آ گئی

راحیلؔ فاروق

پنجاب (پاکستان) سے تعلق رکھنے والے اردو شاعر۔

یہ کلام اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on pinterest
Share on reddit
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لطفِ سخن کچھ اس سے زیادہ

ہم روایت شکن روایت ساز

پر

خوش آمدید!

باتیں ہماری یاد رہیں گی۔۔۔

تنبیہ