کس کی پھونک ہے یا رب کیا کمال کی شے ہے

اردو شاعری

کس کی پھونک ہے یا رب کیا کمال کی شے ہے
آدمی سمجھتا ہے آدمی کوئی شے ہے

ہم تو ہیں سو ہیں مجبور تو بھی اب گوارا کر
یہ جو عشق ہے تیرا تجھ سے بھی بڑی شے ہے

ہم نبھائیں گے تجھ سے تیرے بعد تک اے دوست
عشق دائمی ہے اور حسن عارضی شے ہے

اور بھی حوادث ہیں حق وصولنے والے
آپ زندگی لے لیں دل تو عام سی شے ہے

دیر سے حرم تک اور ذات سے زمانے تک
فتنے کم نہیں لیکن تو کچھ اور ہی شے ہے

تیرے بھی بکھرنے کا انتظار ہے کب سے
جو ہے دامنِ دل میں سو گری پڑی شے ہے

دوسروں کو کیا راحیلؔ دیجیے حذر کا درس
جانتے تو ہم بھی تھے عاشقی بری شے ہے

راحیلؔ فاروق

پنجاب (پاکستان) سے تعلق رکھنے والے اردو شاعر۔

یہ کلام اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on pinterest
Share on reddit
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لطفِ سخن کچھ اس سے زیادہ