تمام شہر سنے گا کہوں تو کس سے کہوں

2 دسمبر 2019 ء

تمام شہر سنے گا کہوں تو کس سے کہوں
ستم شعار کو اچھا کہوں تو کس سے کہوں

سبھی کی ہے یہی بپتا کہوں تو کس سے کہوں
سنوں تو کس کی خدایا کہوں تو کس سے کہوں

کرے گا کون مداوا کہوں تو کس سے کہوں
یہ دکھ نہ تجھ سے مسیحا کہوں تو کس سے کہوں

ہجوم دیکھ کے تنہائیوں سے دل نے کہا
ہر ایک شخص ہے تنہا کہوں تو کس سے کہوں

تمھی نہیں کہ کسی کے ہوئے نہ جیتے جی
یہاں ہے کون کسی کا کہوں تو کس سے کہوں

حقیقتوں ہی سے واقف نہیں ابھی دنیا
فسانہ ہائے تمنا کہوں تو کس سے کہوں

کچھ آ بھی جائے سمجھ میں تو اور مشکل ہے
سمجھ میں یہ نہیں آتا کہوں تو کس سے کہوں

حرم میں اب تو صنم بھی نہیں رہے راحیلؔ
ترا سلام اگر جا کہوں تو کس سے کہوں

راحیلؔ فاروق

پنجاب (پاکستان) سے تعلق رکھنے والے اردو شاعر۔

یہ کلام اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on pinterest
Share on reddit
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لطفِ سخن کچھ اس سے زیادہ