ظلمت کے ساتھ امید بھی حد سے نکل گئی

اردو شاعری

ظلمت کے ساتھ امید بھی حد سے نکل گئی
جو شمع بجھ گئی مرے سینے میں جل گئی

ہے زندگی وہ موت کہ آ آ کے ٹل گئی
سانس آ گئی کہ سینے میں تلوار چل گئی

یا رب یہ کیا ہوا ہے شبِ انتظار میں
صدیاں گزر گئیں کہ مری عمر ڈھل گئی

امید کیا بندھی ترے ہجراں میں وصل کی
آدھی کرن اندھیرے کو سالم نگل گئی

جس نے خزاں میں خوف کے مارے نہ کھولی آنکھ
آج اس کلی کو بادِ بہاری مسل گئی

حسرت کے پاؤں ٹوٹ گئے دم نکل گیا
ہمت ہزار بار گری اور سنبھل گئی

یعنی خطا کے پتلے سے ہو کیوں گئی خطا
اتنی سی بات میرِ دو عالم کو کھل گئی

قدموں کی کیا مجال کہ اس راہ میں اٹھیں
جس راہ پر نگاہ بھی گھٹنوں کے بل گئی

کوزہ گرِ فلک نے اتارا ہے آدمی
جو آفتِ زمانہ تھی سانچے میں ڈھل گئی

راحیلؔ دل میں موت کی ابھری ہے آرزو
ہستی فنا کے قہقہے سن کر مچل گئی

راحیلؔ فاروق

پنجاب (پاکستان) سے تعلق رکھنے والے اردو شاعر۔

یہ کلام اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on pinterest
Share on reddit
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لطفِ سخن کچھ اس سے زیادہ

ہم روایت شکن روایت ساز

پر

خوش آمدید!

باتیں ہماری یاد رہیں گی۔۔۔

تنبیہ