بازار تو ہیں لیکن آفت کی گرانی ہے

اردو شاعری

بازار تو ہیں لیکن آفت کی گرانی ہے
جس شہر میں یوسف ہے وہ شہر بھی فانی ہے

جو بیت گئی دل پر آنکھوں کو سنانی ہے
مجرم کی کہانی ہے محرم کی زبانی ہے

وہ حسن کا موجد ہے جو عشق کا بانی ہے
دل اس کا نشانہ ہے درد اس کی نشانی ہے

جوبن پہ ہے یارانہ زاری میں جوانی ہے
مٹی ہے ہواؤں میں اور آگ پہ پانی ہے

دانش کی تو دانش ہی خود دشمنِ جانی ہے
آثارِ جنوں میں سے اک فلسفہ دانی ہے

سننے کی جو ہمت ہو کہنے کا جو ہو یارا
ہر زندگی افسانہ ہر شخص کہانی ہے

فطرت میں نہیں ملتے رقت کے یہ نظارے
جھیلوں میں نہیں ہوتا آنکھوں میں جو پانی ہے

الفاظ و معانی خود نامہ بر و قاصد ہیں
شعروں کی روانی بھی پیغام رسانی ہے

تو چیز سہی لیکن چیزیں ہیں زمانے میں
ہر ذات کا پرتو ہے ہر شخص کا ثانی ہے

سرمایۂِ اہلِ فن کچھ آگ ہے کچھ پانی
کچھ اشک فشانی ہے کچھ شعلہ بیانی ہے

رستہ بھی پکڑنا ہے منزل ہی سے منزل کا
منزل بھی ہمیں گویا رستے سے اٹھانی ہے

راحیلؔ ہم اہلِ دل ہانکے ہوئے ہر دم ہیں
پہلو میں قیامت ہے آنی ہے نہ جانی ہے

راحیلؔ فاروق

پنجاب (پاکستان) سے تعلق رکھنے والے اردو شاعر۔

یہ کلام اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on pinterest
Share on reddit
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لطفِ سخن کچھ اس سے زیادہ

ہم روایت شکن روایت ساز

پر

خوش آمدید!

باتیں ہماری یاد رہیں گی۔۔۔

تنبیہ