یاس کا جب شکار ہو جاؤ

اردو شاعری

یاس کا جب شکار ہو جاؤ
خود شبِ انتظار ہو جاؤ

یار لوگوں کے یار ہو جاؤ
ایک ہو بےشمار ہو جاؤ

آپ اپنا غبار ہو جاؤ
اپنے سر پر سوار ہو جاؤ

اور کچھ بےقرار ہو جاؤ
ڈوب جاؤ تو پار ہو جاؤ

یا تو ایمان دار ہو جاؤ
یا عبادت گزار ہو جاؤ

اس سے پہلے کہ خوار ہو جاؤ
خود ہی اپنا مزار ہو جاؤ

کچھ بھی دیوانہ وار ہو جاؤ
اور پروردگار ہو جاؤ

نور ہو جاؤ نار ہو جاؤ
کچھ تو پایانِ کار ہو جاؤ

زندگی بےچراغ ہے راحیلؔ
ہر دیے پر نثار ہو جاؤ

راحیلؔ فاروق

پنجاب (پاکستان) سے تعلق رکھنے والے اردو شاعر۔

یہ کلام اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on pinterest
Share on reddit
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لطفِ سخن کچھ اس سے زیادہ