ہاں تو کس کو ستا کے لوٹ آئے

اردو شاعری

ہاں تو کس کو ستا کے لوٹ آئے
تم بہت دور جا کے لوٹ آئے

راہ ہموار پا کے لوٹ آئے
چلے اور لڑکھڑا کے لوٹ آئے

سبھی شکوے بھلا کے لوٹ آئے
خود کو خود ہی منا کے لوٹ آئے

پینے والوں کا کیا ٹھکانا ہے
ڈگمگا ڈگمگا کے لوٹ آئے

کوئی دستار ہے کوئی دستار
سرپھرے سر جھکا کے لوٹ آئے

تنگ آ کے گئے تھے کس کس سے
تنگ کس کس سے آ کے لوٹ آئے

اتنے ڈنکے بجے تھے جانے کے
اس قدر چھپ چھپا کے لوٹ آئے

جو خدا بن گئے تھے ہجراں میں
تو وہ بندے خدا کے لوٹ آئے

زخم ایسے بھی کیا ضروری تھے
ٹھوکریں کیوں نہ کھا کے لوٹ آئے

ساتھ چل لیتے دو قدم راحیلؔ
تم تو رستہ بتا کے لوٹ آئے

راحیلؔ فاروق

پنجاب (پاکستان) سے تعلق رکھنے والے اردو شاعر۔

یہ کلام اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on pinterest
Share on reddit
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لطفِ سخن کچھ اس سے زیادہ

ہم روایت شکن روایت ساز

پر

خوش آمدید!

باتیں ہماری یاد رہیں گی۔۔۔

تنبیہ