حسن کا حق ادا زباں سے کروں

اردو شاعری

حسن کا حق ادا زباں سے کروں
عشق کا ترجمہ کہاں سے کروں

شکوہ کس کس کا آسماں سے کروں
نکتہ داں ہو تو نکتہ داں سے کروں

مصرع ایجاد داستاں سے کروں
دل کا کیا ذکر مہرباں سے کروں

دل کا اچھا نہیں اچانک ذکر
بات آغاز دو جہاں سے کروں

رفتگاں سے گلے ہیں اے ہمدم
چاہتا ہوں کہ رفتگاں سے کروں

سوچ تک ساتھ چھوڑ دیتی ہے
بات کیا اس بلائے جاں سے کروں

ابتدا انتہا نہیں معلوم
عرض کہیے تو درمیاں سے کروں

آدمی ہے امید پر زندہ
کیا امید ایسے ناتواں سے کروں

مجھ سے صیاد کہہ گیا راحیلؔ
رابطہ اہلِ گلستاں سے کروں

راحیلؔ فاروق

پنجاب (پاکستان) سے تعلق رکھنے والے اردو شاعر۔

یہ کلام اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on pinterest
Share on reddit
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لطفِ سخن کچھ اس سے زیادہ

ہم روایت شکن روایت ساز

پر

خوش آمدید!

باتیں ہماری یاد رہیں گی۔۔۔

تنبیہ