مجنوں کہو نہ اس کو جو لیلیٰ میں کھو گیا

اردو شاعری

مجنوں کہو نہ اس کو جو لیلیٰ میں کھو گیا
جو جس میں کھو گیا وہی وہ آپ ہو گیا

کیا شیخ نے بِہشت کی تصویر کھینچ دی
ایک اور اجَل گِرِفتہ خرابات کو گیا

مُلّا کو بھینٹ کی یہ بُری چاٹ لگ گئی
سرمد شہید خون سے مسجد بھگو گیا

ہجراں غُنودگی میں غنیمت گزر گئے
آغوش میں غزل کی میں غم کھا کے سو گیا

اے تو کہ تو نے میں نہیں رہنے دیا مجھے
اپنا پتا پکار کہ میں خود سے کھو گیا

اَسرار یوں تو سر میں سمانے کے تھے نہیں
سودا سما گیا تو سبھی کچھ سمو گیا

دل باغ باغ تھا مگر اس نے خبر نہ لی
اچھی زمین دیکھ کے غم بیج بو گیا

سجدے نے توڑ دی تھی عَزازیل کی کمر
عاجز وہ ہے کہ بارِ امانت بھی ڈھو گیا

روتی گئی ہے وقت کی راہوں پہ عاشقی
ایک ایک سنگِ میل کو سیلاب دھو گیا

باتیں تو تھیں وہی جو ہمیشہ کی ہیں مگر
راحیلؔ حرف حرف میں نغمے پرو گیا

راحیلؔ فاروق

پنجاب (پاکستان) سے تعلق رکھنے والے اردو شاعر۔

یہ کلام اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on pinterest
Share on reddit
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لطفِ سخن کچھ اس سے زیادہ

ہم روایت شکن روایت ساز

پر

خوش آمدید!

باتیں ہماری یاد رہیں گی۔۔۔

تنبیہ