انسان کے دکھوں کا مداوا کہیں نہیں

اردو شاعری

انسان کے دکھوں کا مداوا کہیں نہیں
دنیا تو ہے مگر مری دنیا کہیں نہیں

ہوتے ہیں جس کے تذکرے ہوتا کہیں نہیں
ہو آدمی نہ آدمی ایسا کہیں نہیں

ہر جا تماش بین ہیں بینا کہیں نہیں
اندھوں نے طے کیا ہے تماشا کہیں نہیں

اچھوں کو یہ خیال کہ ہم سا کہیں نہیں
اندیشہ یہ بروں کو کہ اچھا کہیں نہیں

انسان کا کمال بھی اس کا خیال تھا
تھا جا بجا گمان مگر تھا کہیں نہیں

انسان جیسی جنس بھی ارزاں کہیں نہ ہو
بازار میں خریدنے والا کہیں نہیں

جس کا ہو دل پہ نقش وہی بادشاہ ہے
سکہ خدا کے نام کا چلتا کہیں نہیں

مسجد میں کیا کسی کو کوئی بت کدے سے لائے
تُو تو کہیں نہیں ہے خدایا کہیں نہیں

راحیلؔ تم تو بکتے ہو ہذیان روز و شب
ہر چیز ہر جگہ ہے بھلا کیا کہیں نہیں

راحیلؔ فاروق

پنجاب (پاکستان) سے تعلق رکھنے والے اردو شاعر۔

یہ کلام اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on pinterest
Share on reddit
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لطفِ سخن کچھ اس سے زیادہ

ہم روایت شکن روایت ساز

پر

خوش آمدید!

باتیں ہماری یاد رہیں گی۔۔۔

تنبیہ