عاشقی کام ہے اور کام بھی آسان نہیں

7 اکتوبر 2018 ء

عاشقی کام ہے اور کام بھی آسان نہیں
خیر بھی گزرے تو یا دل نہیں یا جان نہیں

گو کسی اور کا ہونے کا اب امکان نہیں
حسن کی داد نہ دے عشق کی یہ شان نہیں

ہم مسافر نہیں ہم بےسروسامان نہیں
وحشتیں دشت میں گھر رکھتی ہیں مہمان نہیں

گو مجھے عرض تمنا کا کم ارمان نہیں
آپ خود بھی تو مرے حال سے انجان نہیں

رو دیے خود بھی جہاں روتے کسی کو دیکھا
درد کو اپنے پرائے کی بھی پہچان نہیں

بےخودی کا ہے وہ عالم کہ تجھے کیا روئیں
یاد خود کو بھی کوئی وعدہ و پیمان نہیں

یہ ہے تنقید کی حکمت کہ ادب ایک طرف
اب کسی چائے کی پیالی میں بھی طوفان نہیں

ہم جسے دیکھتے ہیں اس میں تجھے دیکھتے ہیں
حسن والوں پہ بھی کچھ کم ترے احسان نہیں

مکہ میں شوق سے داروغے رکھیں آلِ سعود
دل کے کعبے کا تو وہ آپ بھی دربان نہیں

ہائے راحیلؔ کی غزلوں کے پرخچے نہ اڑا
یہ ترے چاہنے والے کا گریبان نہیں

راحیلؔ فاروق

پنجاب (پاکستان) سے تعلق رکھنے والے اردو شاعر۔

یہ کلام اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on pinterest
Share on reddit
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لطفِ سخن کچھ اس سے زیادہ

ہم روایت شکن روایت ساز

پر

خوش آمدید!

اردو شاعری

باتیں ہماری یاد رہیں گی۔۔۔

تنبیہ

خوش آمدید۔ آپ کی یہاں موجودگی کا مطلب ہے کہ آپ کو اردو گاہ کے جملہ قواعد و ضوابط سے اتفاق ہے۔ تشریف آوری کا شکریہ!