ایسے معشوق پہ جی جان بھی صدقے کیجے

تحت اللفظ

دیں تو کیا چیز ہے ایمان بھی صدقے کیجے
ایسے معشوق پہ جی جان بھی صدقے کیجے

اب کے گر فصلِ گل آوے تو گلوں کے اوپر
پھاڑ کر اپنا گریبان بھی صدقے کیجے

گل فروش اس کی تمنا میں یہی کہتے ہیں سب
ادھر آ جائے تو دکان بھی صدقے کیجے

گرچہ انسان میں ہوتا ہے عجب حسن و نمک
اے پری تجھ پہ تو انسان بھی صدقے کیجے

فصلِ گل کہتی ہے اے مصحفیؔ داغوں پہ ترے
گل تو کیا لالۂ نعمان بھی صدقے کیجے

یہ پیشکش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on pinterest
Share on reddit
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لطفِ سخن کچھ اس سے زیادہ