ٹھہر گئے مگر آوارگی نہیں چھوڑی

8 مارچ 2018 ء

ٹھہر گئے مگر آوارگی نہیں چھوڑی
زمانہ چھوڑ دیا وہ گلی نہیں چھوڑی

تمھارے بعد تمھاری کمی نہیں چھوڑی
فلک نے طرزِ ستم ایک بھی نہیں چھوڑی

زمانے والے اسے بے‌خودی سمجھتے ہیں
وہ اک نماز جو ہم نے کبھی نہیں چھوڑی

ترے حضور نے دیوانہ کر دیا ایسا
ترے غیاب میں بھی بندگی نہیں چھوڑی

چڑھا وہ دن کہ خمار اور میکشوں کو چڑھا
شراب رات کی چھوڑی ہوئی نہیں چھوڑی

ترے کرم نے جسے رشکِ دو جہان کیا
ترے غضب نے بھی بستی وہی نہیں چھوڑی

زبان گنگ ہوئی تو دل اور بھی دھڑکا
غزل کہی نہ کہی عاشقی نہیں چھوڑی

سناؤ حال اگر کوئی حال ہے راحیلؔ
سنا ہے عشق نے حسرت کوئی نہیں چھوڑی

راحیلؔ فاروق

پنجاب (پاکستان) سے تعلق رکھنے والے اردو شاعر۔

یہ کلام اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on pinterest
Share on reddit
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لطفِ سخن کچھ اس سے زیادہ