کنجِ باغ میں

تحت اللفظ

جھونکا نسیمِ صبح کا بن کر گزر گئی
وہ نو بہارِ ناز ادھر سے ادھر گئی

اک پل میں کنجِ صحنِ چمن جگمگا گیا
اک برق تھی کہ صحنِ چمن سے گزر گئی

نرگس نے اس کی راہ میں سجدے بچھا دیے
حیراں نگاہ ساتھ گئی وہ جدھر گئی

گستاخ ڈالیاں ہوئیں جب اس کی شانہ گیر
ہر بلبل اس کا پھو ل سا منہ چوم کر گئی

اک شرمگیں ادا تھی کہ آنکھوں میں بس گئی
اک سرمگیں نگہ تھی کہ دل میں اتر گئی

اللہ رے اس کے حسن کی رعب آفرینیاں
ہر آرزوئے شوخ قریب آ کے ڈر گئی

یہ پیشکش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on pinterest
Share on reddit
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لطفِ سخن کچھ اس سے زیادہ

ہم روایت شکن روایت ساز

پر

خوش آمدید!

قرأت ہائے تازہ

تنبیہ