پوچھا کہ وجہِ زندگی بولے کہ دل داری مری

تحت اللفظ

پوچھا کہ وجہِ زندگی بولے کہ دل داری مری
پوچھا کہ مرنے کا سبب بولے جفا کاری مری

پوچھا کہ دل کو کیا کہوں بولے کہ دیوانہ مرا
پوچھا کہ اس کو کیا ہوا بولے کہ بیماری مری

پوچھا ستا کے رنج کیوں بولے کہ پچھتانا پڑا
پوچھا کہ رسوا کون ہے بولے دل آزاری مری

پوچھا کہ دوزخ کی جلن بولے کہ سوزِ دل ترا
پوچھا کہ جنت کی پھبن بولے طرح داری مری

پوچھا کہ مضطرؔ کیوں کیا بولے کہ دل چاہا مرا
پوچھا تسلی کون دے بولے کہ غم خواری مری

یہ پیشکش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on pinterest
Share on reddit
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لطفِ سخن کچھ اس سے زیادہ
عید مبارک - اردو گاہ

خوش آمدید۔ آپ کی یہاں موجودگی کا مطلب ہے کہ آپ کو اردو گاہ کے جملہ قواعد و ضوابط سے اتفاق ہے۔ تشریف آوری کا شکریہ!