زلف برہم سنبھال کر چلیے

تحت اللفظ

زلف برہم سنبھال کر چلیے
راستہ دیکھ بھال کر چلیے

موسمِ گل ہے اپنی بانہوں کو
میری بانہوں میں ڈال کر چلیے

مے کدے میں نہ بیٹھیے تاہم
کچھ طبیعت بحال کر چلیے

کچھ نہ دیں گے تو کیا زیاں ہوگا
حرج کیا ہے سوال کر چلیے

ہے اگر قتل عام کی نیت
جسم کی چھب نکال کر چلیے

کسی نازک بدن سے ٹکرا کر
کوئی کسب کمال کر چلیے

یا دوپٹہ نہ لیجیے سر پر
یا دوپٹہ سنبھال کر چلیے

یار دوزخ میں ہیں مقیم عدمؔ
خلد سے انتقال کر چلیے

یہ پیشکش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on pinterest
Share on reddit
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لطفِ سخن کچھ اس سے زیادہ