حادثہ ایک دم نہیں ہوتا

تحت اللفظ

عام فیضانِ غم نہیں ہوتا
ہر نفس محترم نہیں ہوتا

یا محبت میں غم نہیں ہوتا
یا مرا شوق کم نہیں ہوتا

نا مرادی نے کر دیا خوددار
اب سرِ شوق خم نہیں ہوتا

شوق ہی بد گمان ہوتا ہے
اس طرف سے ستم نہیں ہوتا

راستہ ہے کہ کٹتا جاتا ہے
فاصلہ ہے کہ کم نہیں ہوتا

وقت کرتا ہے پرورش برسوں
حادثہ ایک دم نہیں ہوتا

ٹوٹ جاتا ہے دل مگر قابلؔ
عشق مانوسِ غم نہیں ہوتا

یہ پیشکش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on pinterest
Share on reddit
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لطفِ سخن کچھ اس سے زیادہ