خاموش ہے دنیا دل والو کوئی شعر کہو کوئی بات کرو

اردو شاعری

خاموش ہے دنیا دل والو کوئی شعر کہو کوئی بات کرو
ہر دکھ ہے سوالی ہونٹوں پر کچھ رزقِ سخن خیرات کرو

ذہنوں میں گونجتے خالی پن پر دل بھر آنا نعمت ہے
للکار رہے ہیں سناٹے کوئی آہ بھرو انھیں مات کرو

جتنے منہ ہیں اتنی باتیں جیتے جی کوئی کیا جانے
خوش ہو کہ اندھیرا کافی ہے ہر رنگ بسر یہ رات کرو

دنیا میں گزارنی مشکل ہے سرکار زمانہ ظالم ہے
تم سے تو کہا تھا دل میں رہو بانہوں میں گزر اوقات کرو

فیضان تمھارا جاری و ساری ہے یا شیخ زمانے میں
ایک آدھ نگاہ تو اپنی جانب بھی دامت برکات کرو

ہجراں میں ایک ہی حالت پر یوں دل کا رہنا مہلک ہے
دو چار گھڑی انکار کرو دو چار گھڑی اثبات کرو

تم اہلِ ہوش کی سنتے ہو تم اہلِ ہوش کو کیا سمجھو
دیوانہ ملے کوئی تو اس سے یہ استفسارات کرو

راحیلؔ جو عرضی ہاتھ میں ہے لکھوا کے انھی سے لائے ہو
تم چیز ہی کیا ہو صاحب زادے پیش جو معروضات کرو

راحیلؔ فاروق

پنجاب (پاکستان) سے تعلق رکھنے والے اردو شاعر۔

یہ کلام اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on pinterest
Share on reddit
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لطفِ سخن کچھ اس سے زیادہ

ہم روایت شکن روایت ساز

پر

خوش آمدید!

باتیں ہماری یاد رہیں گی۔۔۔

تنبیہ