جہاں جہاں تجھے ڈھونڈا وہاں وہاں پایا

8 جون 2019 ء

جہاں جہاں تجھے ڈھونڈا وہاں وہاں پایا
پھر اس کے بعد بھی پایا تو بےنشاں پایا

جہاں میں عشق کیا رازِ دو جہاں پایا
وہی ہے دشمنِ جاں جس کو جانِ جاں پایا

قفس سے نکلے تو برباد آشیاں پایا
اماں ملی تو بہت خود کو بےاماں پایا

ہر ایک حسن کا پیکر ہے ماورائے گماں
ہر ایک چاہنے والے کو بدگماں پایا

سیاہ خانۂِ دل میں اتر کے دیکھا تو
جو کعبے میں نہ ملا تھا وہ اپنے ہاں پایا

ستم کرے تو یہ دشمن کی مہربانی ہے
ستم تو یہ ہے کہ دشمن کو مہرباں پایا

وہ عشق ہے جسے آئینہ حسن کہتا تھا
مکاں کے پردے میں موجود لامکاں پایا

اسے بھی گردشِ ایام کہیے کیا راحیلؔ
جو کھو کے بیٹھ رہے تھے وہ ناگہاں پایا

راحیلؔ فاروق

پنجاب (پاکستان) سے تعلق رکھنے والے اردو شاعر۔

یہ کلام اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on pinterest
Share on reddit
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لطفِ سخن کچھ اس سے زیادہ