موتی ہیں کہ اندھوں میں ہنر رول رہا ہے

اردو شاعری

ذو قافیتین غزل

 

موتی ہیں کہ اندھوں میں ہنر رول رہا ہے
جادو ہے کہ سر چڑھ کے مگر بول رہا ہے

دھرتی کی تو چھاتی سے لہو پھوٹ پڑا تھا
انسان اب افلاک کا در کھول رہا ہے

یا نزع کے عالم میں الٹتا ہے پرندہ
یا تازہ گرفتار ہے پر تول رہا ہے

کہتے ہیں کہ دل کی کوئی قیمت نہیں لیکن
بازار میں اس جنس کا ہر مول رہا ہے

طوفان میں جاری ہے سفر راہ نشیں کا
دل ڈوب رہا ہے کبھی سر ڈول رہا ہے

دنیا میں جو آیا ہے ٹھہرنے نہیں پایا
بستر ہی یہاں آٹھ پہر گول رہا ہے

جو زہر کے گھونٹ آپ پیا کرتے تھے راحیلؔ
کانوں میں یہ رس ان کا اثر گھول رہا ہے

راحیلؔ فاروق

پنجاب (پاکستان) سے تعلق رکھنے والے اردو شاعر۔

یہ کلام اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on pinterest
Share on reddit
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لطفِ سخن کچھ اس سے زیادہ

ہم روایت شکن روایت ساز

پر

خوش آمدید!

باتیں ہماری یاد رہیں گی۔۔۔

تنبیہ