سبقِ اولیں نہیں بھولا

غزل

زار

سبقِ اولیں نہیں بھولا
کچھ نہ سمجھا، کہیں نہیں بھولا

راستے منزلوں کو بھول گئے
میں رخِ ہم نشیں نہیں بھولا

میں نے گھبرا کے موند لیں آنکھیں
داستاں گو وہیں نہیں بھولا

چند آہیں خلا میں لرزاں ہیں
انھیں عرشِ بریں نہیں بھولا

خاص باتوں کا دکھ زیادہ ہے
ورنہ جو عام تھیں، نہیں بھولا

مجھے سب کچھ ہی یاد ہے راحیلؔ
نہیں بھولا، نہیں، نہیں بھولا

راحیلؔ فاروق

زار کے مصنف۔ پنجاب، پاکستان سے تعلق رکھنے والے اردو شاعر۔

یہ غزل اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on pinterest
Share on reddit
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لطفِ سخن کچھ اس سے زیادہ

ہم روایت شکن روایت ساز

پر

خوش آمدید!

باتیں ہماری یاد رہیں گی۔۔۔

تنبیہ