خشک پھولوں کی باس لگتی ہے

غزل

زار

خشک پھولوں کی باس لگتی ہے
زندگی بدحواس لگتی ہے

نکل آتا ہے آفتاب مگر
شب قرینِ قیاس لگتی ہے

ایک شکوہ رہا محبت سے
کہ بہت آس پاس لگتی ہے

تھی کبھی تنگ مفلسی ہم پر
اب تو اپنا لباس لگتی ہے

کہیں منزل نظر نہیں آتی
تب مسافر کو پیاس لگتی ہے

آئنہ دیکھ اے جفا کاری
تو بھی کچھ کچھ اداس لگتی ہے

یوں تو کچھ بھی نہیں بچا راحیلؔ
بعض اوقات آس لگتی ہے

راحیلؔ فاروق

زار کے مصنف۔ پنجاب، پاکستان سے تعلق رکھنے والے اردو شاعر۔

یہ غزل اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on pinterest
Share on reddit
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لطفِ سخن کچھ اس سے زیادہ

ہم روایت شکن روایت ساز

پر

خوش آمدید!

باتیں ہماری یاد رہیں گی۔۔۔

تنبیہ